پاکستان کی آزادی کپ میں پہلی فتح

لاہور کے تاریخی قذافی سٹیڈیم میں آزادی کپ کے پہلے ٹی 20 انٹرنیشنل میں ورلڈ الیون کو پاکستان نے 20 رنز سے ہرا دیا۔
اننگز کے اختتام تک ورلڈ الیون کی ٹیم اپنے مقررہ 20 اوورز میں سات وکٹوں پر 177 رنز بنا سکی۔
ورلڈ الیون کی جانب سے چار کھلاڑیوں نے 20 سے 30 کے درمیان سکور کیے لیکن کوئی اس سے آگے سکور نہ بڑھا سکا۔
پاکستان کی جانب سے سہیل خان، رمان ریئس اور شاداب خان نے دو دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔
ہاشم آملہ اور تمیم اقبال نے اننگز کا محتاط آغاز کیا مگر پھر ہاشم آملہ نے اپنی بیٹنگ کے جوہر دکھانے شروع کیے۔ پہلے سہیل خان اور پھر اس کے بعد حسن علی کو چوکے پڑے تو تمیم اقبال نے بھی کھل کر کھیلنا شروع کیا۔
پانچ اوور کے بعد ورلڈ الیون کا سکور 39 رنز تھا لیکن اس کے بعد چھٹے اوور میں رمان ریئس نے تمیم اقبال کی وکٹ حاصل کر لی جو 18 رنز بنا سکے اور اسی اوور کے آخری گیند پر انھوں نے ہاشم آملہ کو بھی 26 رنز پر آؤٹ کر دیا۔
تمیم اقبال نے 18 رنز بنائےدو وکٹیں گرنے کے بعد کپتان فاف ڈو پلیسی نے عمدہ بیٹنگ کا مظاہرہ کرنا شروع کیا اور ٹم پین کے ساتھ 53 رنز کی شراکت داری قائم کی لیکن 13ویں اوور میں شاداب خان نے کپتان ڈو پلیسی کو 29 رنز پر آؤٹ کر دیا۔
اگلے ہی اوور میں سہیل خان نے آسٹریلیا کے ٹم پین کو 25 رنز پر آؤٹ کر کے پاکستان کے لیے چوتھی کامیابی حاصل کر لی۔
15ویں اوور میں ڈیوڈ ملر نے شاداب خان کو بلند و بالا چھکا مارا لیکن اگلی گیند پر شاداب نے ان کو سٹمپ آؤٹ کروا دیا۔
16ویں اوور میں تھسارا پریرا نے رمان ریئس کو لگاتار تین چوکے لگائے لیکن اگلے اوور میں گرانٹ ایلیٹ کو سہیل خان نے آؤٹ کر دیا۔
اننگز کے آخری چار اوورز میں پریرا اور ڈیرن سیمی نے اپنی سی کوشش کی لیکن پاکستان کے سکور کے سامنے وہ بے بس ہو گئے۔
عمران طاہر نے اپنے آخری اوور میں بابر اعظم کو 86 رنز پر آؤٹ کر دیا
اس سے قبل جب میچ شروع ہوا تو ٹاس ہارنے کے بعد پاکستان نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے اپنے بیس اوورز میں 197 رنز بنائے اور اس کے پانچ کھلاڑی آؤٹ ہوئے تھے۔
بابر اعظم 86 رنز بنا کر نمایاں رہے جبکہ شعیب ملک نے بھی صرف 29 گیندوں پر 38 رنز بنا کر ان کا اچھا ساتھ دیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں