پاکستا نی ڈا کٹر رتھ فاؤ اور بھارتی مدر ٹریسا

اگر اللہ تعالیٰ نے بھارت کو ڈاکٹر مدر ٹریسا دی تھی تو پاکستان کو ڈاکٹر رتھ فاؤ دی تھی۔اگر چہ آج وہ ہم میں نہیں رہیں ۔مگر ان کا کام ہمیں ہر دور میں ان کی یاد دلاتارہے گا ۔
اگر بھارت میں بے یارومددگار وں کو گلے سے لگانے والی مدرٹریسا تھی تو پاکستان میں ڈاکٹر رتھ فاؤ ے تھی ۔جس نے جذام کے مریضوں کے لیے اپنی زندگی وقف کر دی ۔ جس کی کوششوں سے آج اللہ تعالیٰ نے پاکستان سے جذام کا خاتمہ کر دیا ہے ۔ وہ ان کاعلاج اپنے ہاتھوں سے اس طرح کرتی ۔کہ جب ان کے سگے رشتہ دار ان سے دور ہو جاتے۔ اور ان سے ملنا نہ چاہتے ۔تو ڈاکٹر رتھ فاؤ نامی فرشتہ ان کا ہاتھ تھام لیتی ہیں ۔ آج ہم میں ڈاکٹر رتھ فاؤ یا مدر ٹریسا نہیں ہے ۔ہم اللہ تعالیٰ
سے دعا کرتے ہیں ۔کہ اللہ تعالیٰ ہمیں ان جیسی کوئی ایسی مدر عطا فرمائے ۔جو فرقہ واریت کا خاتمہ کر دے ۔جہاں دنیا سے مہلک بیماریوں کا خاتمہ ہوا ہے وہاں دہشت گردی کا بھی خاتمہ ہوجائے ۔اور پاکستان امن اور سکون کا گہوارہ بن جائے ۔امین

اپنا تبصرہ بھیجیں