گندے ہاتھ

یہ میرا فرض بنتا ہے کہ اس کے ہاتھ دھلواؤں
سنا ہے اُس نے میری زات پر کیچڑ اُچھالا ہے ۔
معزز قارئین
اس شعر میں محبوب بہت سادہ دکھایا گیا ہے ۔جب کسی نے اُس کے محبوب کے بارے میں بتایا کہ
تمھارا محبوب تمھاری زات پر کیچڑ اچھال رہا ہے ۔تونادان محبوب کو زرابھی سمجھ نہ آئی۔جونہی اُس نے محبوب کو دیکھا۔تو پانی بھر کر اپنے محبوب کے ہاتھ دھلوانے چلے گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں