پاک فوج نے دہشت گردوں سے کینیڈین خاندان کو رہا کرا الیا

پاک فوج کا ایک ایسا کارنامہ جیسے سنہری حروفوں میں لکھا جائےگا.وہ یہ ہے کہ گزشتہ روز پاک فوج نے دہشت گردوں سے مقابلے کے بعد کینیڈین خاندان کو رہا کرا الیا
.زرائع کے مطابق کرم ایجنسی سے بازیاب کرائے گئے کینیڈین خاندان کو پی آئی اے کی پرواز پی کے 785 سے برطانیہ کے راستے کینیڈا روانہ کردیا گیا ہے۔

کینیڈین شہری جوشوا بوائل، اس کی اہلیہ کیتلان کولمین اور ان کے تین بچوں کو گزشتہ روز پاک فوج نے دہشت گردوں سے مقابلے کے بعد بازیاب کرایا تھا۔

اس سے قبل کینیڈین شہری اور اس کے اہلخانہ کو امریکی کمانڈوز کے حوالے کیا گیا تو انہوں نے امریکی فوجی طیارے میں بیٹھنے سے انکار کردیا تھا۔

جوشوال بوائل کا کہنا تھا کہ وہ امریکی فوجیوں کے ساتھ جانے کے بجائے اسلام آباد میں کینیڈین حکام سے ملنا چاہتے ہیں۔

خیال رہے کہ کینیڈین شہری جوشوا بوائل نے اہلیہ کیتلان کولمین سے پہلے 2009 میں زینب خضر نامی خاتون سے شادی کی تھی۔

جوشوا کی پہلی بیوی کا خاندان القاعدہ سے مبینہ تعلق پر کینیڈا میں پہلی دہشت گرد فیملی کے نام سے جانا جاتا ہے اور اسی وجہ سے انہیں خدشہ ہے کہ امریکا جانے پر انہیں قانونی کارروائی کا سامنا کرنا پڑسکتا ہے۔

دوسری جانب امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پاک فوج کے آپریشن میں امریکی خاتون سمیت 5 افراد کی بازیابی پر اسے پاک امریکا تعلقات میں مثبت لمحہ قرار دیا۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا کہ پاکستانی تعاون سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ خطے میں سیکیورٹی کے لیے امریکی خواہشات کو تسلیم کرتا ہے۔

ادھر بازیاب ہونے والے جوشوا بوائل کے والدین نے بھی اپنے ایک بیان میں کہا کہ اپنی جانیں خطرے میں ڈال کر ہمارے خاندان کو بحفاظت رہائی دلوانے پر پاک فوج کے جوانوں کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔
کینیڈین شہری جوشوا بوائل، نے انکشاف کیا ہے کہ اس کی اہلیہ کیتلان کولمین کے ساتھ اغواہ کاروں نے زیادتی کی .اور اس کی ایک بیٹی کو قتل بھی کیا .
بازیابی کے بعد اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ انہیں بچانے کے لیے پاکستانی سیکیورٹی اہل کار ان کے اور اغوا کاروں کے درمیان آ گئے تھے اور انہیں بچا لیا۔

جوشوا کا کہنا تھا کہ پاکستان پر حقانی نیٹ ورک کی مدد کا الزام لگایا جاتا ہے مگر انہوں نے خود دیکھا کہ پاک فوج نے اغوا کاروں کی گاڑی گولیوں سے چھلنی کر دیا.

اپنا تبصرہ بھیجیں