کہیں آپ اُلو تو نہیں

اُلو کا پٹھا کسے کہتے ہیں .. یا اپنا اُلّو سیدھا کرنا یعنی اپنا مطلب نکالنا اسی طرح کا ایک اور محاورہ ہے . ” الّو بنانا” یعنی دوسرے کو بے وقوف بنانا
یہ عجیب و غریب محاورے ہیں. جس میں اُلّو کے حوالہ سے بات کی گئی اور معاشرے کے ایک بُرے رویّہ کو سامنے لایا گیا ہے . یا اس پر طنز کیا گیا ہے۔یہ لوگوں کا وہ رویہ ہوتا ہے . اور وہ موقع ہوتا ہے جب آدمی وہ کوئی بھی ہو، اپنا بیگانہ، امیر غریب، دوسرے سے اپنا مطلب نکالنا چاہتا ہے اور مطلب برآری کے لیے دوسرے سے چاپلوسی اور خوشامد کی باتیں کرتا ہے اور مقصد اپنا مطلب نکالنے سے ہوتا ہے۔ اسی مفہوم کو ادا کرنے کے لیے ایک اور محاورہ بھی ہے یعنی دوسرے کو” الّو بنانا” یعنی بیوقوف بنانا۔ہوتا ہے .اس طرح اگر ہم غور کریں تو اُلو ان معامالات میں ہمیں کہیں نظر تو نہیں آتا.مگر آپ اُس انسان کو اُلو ضرو کہہ سکتے ہیں .جو سب سے خوبصورت ہوتا ہے .اور سب کے کام اآتا ہے .اور اُلو بنا رہتا ہے اور دنیا ان جیسے اُلووں کی بدولت ہی پیاری لگتی ہے .میری اس بات سے آپ کو کیا یاد آیا کہ کہیں آپ کا شمار بھی ان اُلووں ًٰن تو نہیں ہوتا… یا دوسری قسم ہے .جسے کہتے ہیں اُلو کا پٹھا………..

اپنا تبصرہ بھیجیں